widget

Friday, 14 November 2014

December muje tuj se koi


دسمبر مجھے
تجھ سے کوئی شکایت
 نہیں ہے نہ کوئی گلہ ہے
کہ تو نے مجھے بے سبب سی
 اُداسی کا تحفہ دیا ہے

نہ مجھ کو تری سرد راتوں کی تنہائیوں
 میں کسی اپنے غم کو جلا کر اُسے تاپنا ہے 
نہ تجھ سے کوئی بات کہنی ہے مجھ کو 
دسمبر!

حقیقت یہی ہے کہ میں تیرے آنے
 سے ہہلے بھی ایسا ہی تھا
نارسائی کے غم میں سلگتا، اداسی کی 
چادر میں لپٹا اور اپنے ہی اندر کی 
ویرانیوں پر کبھی شعر کہتا
کبھی نظم لکھتا 
دسمبر!
حقیقیت یہی ہے ترے بعد بھی میرے
 معمول میں کوئی تبدیلی آئے
یہ ممکن نہیں
سالہا سال سے میں اسی دائرے 
میں سفر کر رہا ہوں

ترا دوش کوئی نہیں ہے دسمبر!
مجھے تجھ سے کوئی شکایت نہیں ہے